ghazal

ان مسکراتے ہونٹوں سے کچھ کام لیجئے
رک رک کے دھیرے دھیرے مرا نام لیجئے
ان دھڑکنوں میں بجتا ہے ہر آن ایک ساز
ان دھڑکنوں سے کوئی تو اب کام لیجئے
چاہت کا میٹھا پانی کہیں بہہ ہی جائے گا
ہٹ چھوڑئے حضور نیا جا م لیجئے
حاضر ہے خود شکار شکاری کے واسطے
آئیے نا ہاتھ لا ئیے کڑا دام لیجئیے
چھوڑیں بھی میری بانہہ مجھے درد ہوتا ہے
یہ عشق اوتری شے ہے دو گام لیجئیے

Poem I miss

I still miss that time even when you are with me
when you came across me 1st day
A shrill in your voice
A thrill in your actions
An anxiety in your words
and an excitement in your eyes
as you were going to discover a wonder land.

Poem: Yearn for you…

The breeze was pure
The sky was clear
and moon was hanging
like a crown on baby’s head
creating a yearn for you
and taking me to you
with an invisible thread